PDA

View Full Version : کہوں کیا حال زاہد گلشن طیبہ کی نزہت



Attari1980
08-15-2009, 03:31 PM
کہوں کیاحال زاہد گلشن طیبہ کی نزہت
کہ ہےخلدبریں چھوٹا ساٹکڑامیری جنت

تعالٰی للہ شوکت تیرےنام پاک کی آقا
کہ اب تک عرش اعلٰی کوہےسکتہ تیری ہیبت کا

وکیل اپنا کیا ہےاحمدمختارکومیںنے
نہ کیونکہ پھر رہائی میری منشاہوعدالت کا

بلاتےہیںاسی کوجس کی بگڑی بناتےہیں
کمربندھن ادیارطیبہ کوکھلناہےقسمت کا

کھلیںاسلام کی آنکھیں ہوا ساراجہاں روشن
عرب کےچاندصدقےکیاہی کہنا تیری طلعت کا

نہ کررسوائےمحشرواسطہ محبوب کا یارب
یہ مجرم دورسےہےسن کرنام رحمت کا

مرادیں مانگنےسےملتی ہیںمدینہ میں
ہجوم جودنےروکاہےبڑھنادست حاجت کا

شب اسرٰی ترے جلوؤںنےکچھ ایسا سماں باندھا
کہ ابتک عرش اعظم منتظر ہےتیری رخصت کا

یہاں کےڈوبتےدم میں ادھرجاکرابھرتےہیں
کنارہ ایک ہےبحرندامت بحررحمت کا

غنی ہےدل بھراہےنعمت کونین سےدامن
گدا ہوںمیںفقیرآستان خود بدولت کا

طواف روضہءمولٰی پہ نا واقف بگڑتےہیں
عقیدہ اورہی کچھ ہی ادب دان محبت کا

خزان غم سےدور رکھنامجھ کواسکےصدقےمیں
جوگلاے باغباں ہےعطرتیرےباغ صنعت کا

الٰہی معدمردن پردہہ ائےحائل اٹھ جائیں
اجالامیرےمرقدمیں ہوانکی شمع تربت کا

سناہےروزمحشرآپہی کامونہہ تکیں گےسب
یہاںپوراہوامطلب دل مشتاق رویت کا

وجود پاک باعث خلقت مخلوق ٹھرا
تمھاری شان وحدت سےہوااظہارکثرت کا

ہمیںبھی یاد رکھنا ساکنان کوچہءجاناں
سلام شوق پہنچےبیکس اندشت غربت کا

حسن سرکارطیبہ کاعجب دریارعالی ہے
دردولت پےاک میلا لگا ہےاہل حاجت ک