PDA

View Full Version : سورٰۃ محمد (صلی اللھ تعالی علیھ وسلم) آیت 4



_KHADIM-e-AHLESUNNAT_
05-30-2011, 05:27 AM
http://i55.tinypic.com/345lvgn.jpg



http://www.dawateislami.net/Data/Quran/Data/Aayats/Images/ara/47/4.gif
تو جب کافروں سے تمہارا سامنا ہو(ف۸) تو گردنیں مارنا ہے (ف۹) یہاں تک کہ جب انہیں خوب قتل کرلو (ف۱۰) تو مضبوط باندھو پھر اس کے بعد چاہے احسان کرکے چھوڑ دو چاہے فدیہ لے لو (ف۱۱) یہاں تک کہ لڑائی اپنا بوجھ رکھ دے (ف ۱۲) بات یہ ہے اور اللّٰہ چاہتا تو آپ ہی ان سے بدلہ لیتا(ف ۱۳) مگر اس لئے (ف ۱۴)کہ تم میں ایک کو دوسرے سے جانچے (ف۱۵) اور جو اللّٰہ کی راہ میں مارے گئے اللّٰہ ہرگز ان کے عمل ضائع نہ فرمائے گا (ف

(ف8 )

یعنی جنگ ہو ۔


(ف9 )

یعنی ان کو قتل کرو ۔


(ف10 )

یعنی کثرت سے قتل کر چکو اور باقی ماندوں کو قید کرنے کا موقع آجائے ۔


(ف11 )

دونوں باتوں کا اختیار ہے ۔ مسئلہ : مشرکین کے اسیروں کا حکم ہمارے نزدیک یہ ہے کہ انہیں قتل کیا جائے یا مملوک بنالیا جائے اور احساناً چھوڑنا اور فدیہ لینا ، جو اس آیت میں مذکور ہے وہ سورۂِ برأت کی آیت '' اُقْتُلُوا الْمُشْرِکِیْنَ '' سے منسوخ ہوگیا ۔


(ف12 )

یعنی جنگ ختم ہوجائے اس طرح کہ مشرکین اطاعت قبول کریں اور اسلام لائیں ۔


(ف13 )

بغیر قتال کے انہیں زمین میں دھنسا کر یا ان پر پتّھر برسا کر یا اور کسی طرح ۔


(ف14 )

تمہیں قتال کا حکم دیا ۔


(ف15 )

قتال میں تاکہ مسلمان مقتول ثواب پائیں اور کافر عذاب ۔


(ف16 )

ان کے اعمال کا ثواب پورا پورا دے گا ۔ شانِ نزول : یہ آیت روزِ اُحد نازل ہوئی جب کہ مسلمان زیادہ مقتول و مجروح ہوئے ۔

Attari1980
05-30-2011, 10:01 AM
Jakaz Allah Khair