تَیَمُّم کاطریقہ( حنفی)

تَیَمُّم کی نِیّت کیجئے(نيّت دل کے ارادے کا نام ہے ،زَبان سے بھی کہہ ليں تو بہتر ہے۔مَثَلاً يوں کہئے بے وُضوئی يا بے غسلی يا دونوں سے پاکی حاصل کرنے اور نماز جائز ہونے کے لئےتَیَمُّم کرتی ہوں)بسم اللہ پڑھ کردونوں ہاتھوں کی اُنگلیاں کُشاد ہ کر کے کسی ایسی پاک چیزپرجوزمین کی قسم(مَثَلاًپَتّھر،چُونا،اینٹ، دیوار،مٹّی وغیرہ)سے ہومار کر لَوٹ لیجئے(يعنی آگے بڑھائیے اور پيچھے لائیے)اوراگرزِیادہ گَردلگ جائے تو جھاڑ لیجئے اوراُس سے سارے مُنہ کااِس طرح مَسح کیجئے کہ کوئی حِصّہ رہ نہ جائے اگربال برابربھی کوئی جگہ رَہ گئی تو تَیَمُّم نہ ہوگا۔پھردوسری باراسی طرح ہاتھ زمین پر مار کردونوں ہاتھوں کا ناخُنوں سے لےکر کُہنیوں سَمیت مَسح کیجئے ،کنگن چُوڑیاں جتنے زیور ہاتھ میں پہنے ہو ں سب کو ہٹا کر یا اُتار کرجِلد کے ہر حصّے پر ہاتھ پہنچایئے،اگر ذرّہ برابربھی کوئی جگہ رَہ گئی تو تَیَمُّم نہ ہوگا۔ تَیَمُّم کے مَسح کا بِہتَرطریقہ یہ ہے کہ اُلٹے ہاتھ کے اَنگوٹھے کے عِلاوہ چارانگلیوں کا پَیٹ سید ھے ہاتھ کی پُشت پررکھئے اور انگلیوں کے سِروں سے کُہنیوں تک لے جائیے اورپھر وہاں سے اُلٹے ہی ہاتھ کی ہتھیلی سے سیدھے ہاتھ کے پیٹ کومَس کرتے ہوئے گِٹّے تک لائیے اوراُلٹے انگوٹھے کے پَیٹ سے سیدھے انگوٹھے کی پُشت کامَسح کیجئے۔اسی طرح سیدھے ہاتھ سے اُلٹے ہاتھ کامَسح کیجئے۔ اور اگرایک دم پوری ہتھیلی اور اُنگلیوں سے مَسح کرلیا تب بھی تَیَمُّم ہوگیاچاہے کُہنی سے اُنگلیوں کی طرف لائے یااُنگلیوں سے کُہنی کی طرف لے گئے مگرسُنّت کے خِلاف ہوا ۔ تَیَمُّم میں سر اور پاؤں کامَسح نہیں ہے۔

(بہارِ شريعت حصّہ 2ص76۔ 78وغیرہ)