غدیر خم کا واقعہ


(مفتی محمد اظہار القیوم صدیقی)


یمن میں قیام کے دوران حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کو متعدد واقعات پیش آئے تھے۔ علماء سیرت نے اس میں متعدد روایات ذکر کی ہیں ان میں سے ایک بطور خلاصہ ذکر کی جاتی ہے۔
سیرت کی روایات میں ہے کہ یمن کے علاقہ سے مال غنیمت میں کچھ لونڈیاں آئیں۔ ان اموال غنائم سے بطور خمس حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) نے ایک خادمہ حاصل کی اس پر دیگر ساتھیوں کو کچھ اعتراض ہوا۔ گو موقعہ پر کوئی خاص کشیدگی نہیں ہوئی۔ پھر جب یہ حضرات نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور حج سے واپسی پر مدینہ منورہ کے راستہ میں حضرت بریدہ بن خصیب اسلمی (رضی اللہ تعالی عنہ) نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں یہ اعتراض پیش کیا۔


جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم غدیر خم میں پہنچے تو اس مقام پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کچھ دیر آرام فرمایا۔ اس دوران بعض صحابہ کی طرف سے وہ شکایات پیش کی گئیں جو سفرِ یمن میں حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے متعلق پیش آئی تھیں۔ غدیر خم کے مقام پر ١٨ ذوالحجہ ١٠ھ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک خطبہ ارشاد فرمایا۔ اس خطبہ میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نےجن ضروری امور کو ذکر فرمایا تھا ان میں سے ایک چیز رفع شبہات کے درجہ میں تھی۔


وہ حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے متعلق تھی جو اعتراضات سفرِ یمن میں حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے ہم سفر احباب کو ان کے خلاف پیدا ہوئے تھے ان کی مدافعت کے لئے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی فضیلت بیان فرمائی۔ اور حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی امانت و دیانت کا واضح طور پر ذکر فرمایا ان کلمات میں ایک کلمہ سب سے زیادہ مشہور ہے


من کنت مولاہ فعلی مولاہ


ان کلمات میں حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) سے اعتراضات کا ازالہ مقصؤد تھا اور حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی فضیلت اور ان کے حسن کردار کا بیان کرنا پیش نظر تھا۔ یہ ایک وقتی مسئلہ تھا اس فرمانِ نبوت کے ذریعہ حسن اسلوبی کے ساتھ اختتام پزیر ہو گیا۔ مقام غدیرخم میں کوئی جنگ وغیرہ نہیں ہوئی۔


شیعوں کے عقیدے کا رد


غدیر خم کے واقعہ کو بعض لوگوں نے بڑی اہمیت دی ہے اور اس سے حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی خلافت بلا فصل ثابت کرنے کے لئے نا کام کوشش کی ہے یہ لوگ اس واقعہ کومسئلہ خلافت کے لئے انتہائی درجہ کی قوی دلیل قرار دیتے ہیں یہاں پر چند اشیاء غور طلب ہیں۔ ان پر توجہ فرمانے سے یہ واضح ہو جائے گا کہ یہ دلیل مسئلہ خلافت ہر گز ثابت نہیں کرتی۔
حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) سے متعلق شکایات کا ازالہ جن الفاظ سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ان میں یہ جملہ مزکور ہے کہ : من کنت مولا ہ فعلی مولاہ


یعنی جس شخص کے لئے میں محبوب اور دوست ہوں پس علی بن ابی طالب (رضی اللہ تعالی عنہ) اس کے محبوب اور دوست ہیں۔ یہاں پر مسئلہ خلافت و نقابت کا ذکر تک نہیں ہے۔ اور نہ کسی جماعت کی طرف سے آپ کے سامنے خلافت کے مضمون کو زیر بحث لایا گیا۔ اور نہ ہی کسی شخص نے اس کے متعلق کوئی سوال کیا جس کے جواب میں آپ نے یہ آپ نے یہ کلام فرمایا ہو۔


پھر اس روایت کے اگلے الفاظ بھی غور طلب ہیں ان میں موالات اور معادات کو ایک دوسرے کے بالمقابل ذکر کیا ہے۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ یہاں مولٰی کے لفظ میں ولایت بمقابلہ عداوت ہے معنیٰ خلافت نہیں۔ روایت کے وہ الفاظ یہ ہیں


اللھم وال من ولاہ وعاد من عاداہ

اللہ ! اسے دوست رکھ جو علی (رضی اللہ تعالی عنہ) سے دوستی رکھے اور اس سے عداوت رکھ جو علی (رضی اللہ تعالی عنہ) سے عداوت رکھے ۔

شیعہ حضرات کے نزدیک روایت ھٰزا ( من کنت مولاہ فعلی مولاہ ) حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی خلافت بلا فصل کے لئے نہایت اہم حجت اورقوی تر دلیل ہے ۔ ان کا استدلال یہ ہے کہ رویت ھٰزا میں مولا کا لفظ استعمال فرمایا گیا ہے ، (یعنی جس کا مولا میں ہوں حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) بھی اس کے مولا ہیں ) اور مولا کے معنی خلیفہ اور حاکم کے ہیں۔ چونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تمام امت کے مولا ہیں فلہزا اس فرمان کی بنا پر حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) بھی تمام امت کے مولا ہیں اور یہ روایت مسلم بین الفریقین ہے۔ اور متوارات میں اس کو شمار کیا جاتا ہے لہٰزا اس پر عقیدے کی بنیاد ہو سکتی ہے۔ نیز اس نوع کی روایت کسی دوسرے صحابی کے حق میں وارد نہیں ہوئی۔ فلہٰزا حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی خلافت بلا فصل کے لئے یہ نص صریح ہے اور آپ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد تمام امت کے لئے خلیفہ اور حاکم ہیں۔
روایت ہٰزا کے متعلق فریق مقابل کا یہ دعوٰی کہ یہ روایت بین الفریقین متواتر روایات میں سے ہے قابل غور ہے۔ یہ دعوٰی علی الالطلاق صحیح نہیں۔ وجہ یہ ہے کہ بعض اکابر محدثین نے اس روایت پر کلام کیا ہے۔ اس وجہ سے اس روایت کو متواترات میں سے شمار کرنا صحیح نہیں۔ یہ روایت اخبار آحاد میں سے ہے۔ تاہم بعض علماء اس روایت کی صحت کے قائل ہیں اور روایت کو اپنے مفہوم کے اعتبار سے قبول کرتے ہیں۔ بحر حال ہم بھی اس روایت کو تسلیم کرتے ہیں۔ لیکن اس کے بعد روایت ہٰزا کے معنی ومفہوم میں کلام جاری ہے اس پر توجہ فرمائیں۔

یہ الفاظ کسی دوسرے صحابی کے لئے استعمال نہیں ہوئے یہ درست نہیں ہے۔ اس لئے کہ جناب نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے آزاد شدہ غلام صحابی رسول حضرت زید بن حارثہ (رضی اللہ تعالی عنہ) کے حق میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا تھا۔

قال لزید انت اخونا ومولانا

آٓپ ہمارے بھائی ہیں اور ہمارے مولٰے ہیں۔
( مشکوۃ شریف ص ۲۹۳ بحوالہ بخاری ومسلم باب بلوغ صغیرالفصل الاول )
روایت ہٰزا میں لفظ مولا وارد ہے


مولا کے معنی کتاب وسنت اورلغت عرب میں متعدد پائے جاتے ہیں



النہایہ لابن اثیرالجزری ۔ ( جو لغت حدیث میں مشہور تصنیف ہے ) میں مولا کہ سولہ عدد معانی ذکر کئے ہیں لیکن ان میں خلیفہ بلا فصل اور حاکم والا معنی کہیں نہیں ملتا یکسر منقود ہے۔ یعنی لغت حدیث والوں نے مولا کا یہ معنی کہیں نہیں بیان کیا۔ باقی معانی انہوں نے لکھے ہیں۔ ( النہایہ فی غریب الحدیث ج۴ ص۲۳۱


اسی طرح ؛ المنجد ؛ میں مولا کے اکیس معنی ذکر کئے گے ہیں وہاں بھی مولا کا معنی خلیفہ یا حاکم نہیں پایا گیا۔ یہ تو کسی مسلمان کی تالیف نہیں ایک عسائی کی علمی کاوش ہے۔ سو یہ بات پختہ ہے کہ اس روایت میں مولا کا لفظ خلیفہ اور حاکم کے معنی میں ہر گز وارد نہیں۔ اس طرح کتاب اللہ اور دیگر احادیث صحیح میں مولا کا لفظ خلیفہ یا حاکم کے معنی میں کہیں مستعجل نہیں دیگر معانی میں وارد ہے۔


اہل علم کے لئے یہ لمحہ فکریہ ہے خلافت بلا فصل ثابت کرنے کے لئے نص صریح درکار ہے۔ لفظ ؛ مولا ؛ جیسے مجمل الفاظ جو متعدد معانی کے حامل ہوں اور مشترک طور پر مستعمل ہوتے ہیں سے یہ مدٰعی ہر گز ثابت نہیں ہو سکتا۔

مختصر یہ کہ خلافت بلا فصل کا دعوٰی خاص ہے اور اس کے اثبات کے لئے جو دلیل پیش کی گئی ہے۔ اس میں لفظ مولا اگر بمعنی حاکم ہو تو بھی یہ لفظ عام ہے دلیل عام مدعٰی خاص کو ثابت نہیں کرتی


اگر بالفرض تسلیم کر بھی لیا جائے کہ خلافت بلا فصل کے لئے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے غدیر خم کے موقعہ پر حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے حق میں ارشاد فرمایا تھا اور جناب علی (رضی اللہ تعالی عنہ) بلا فصل خلیفہ نامزد تھے تو درج ذیل چیزوں پر غور فرمائیں اصل مسئلہ کی حقیقت واضح ہو جائے گی۔


(١)

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے انتقال سے کچھ قبل حضرت عباس (رضی اللہ تعالی عنہ) نے حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کو ارشاد فرمایا کہ میں گمان کرتا ہوں کہ شاید نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا وصال ہو جائے اس بنا پر ہم نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت اقدس میں حاضر ہو کر مسئلہ خلافت و امارت کے متعلق عرض کریں۔ اگر یہ امارت ہم میں ہو گی تو ہمیں معلوم ہونا چاہیے اور اگر امارت وخلافت ہمارے سوا دوسروں میں ہو گی تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے متعلق لوگوں کو وصیت فرمادیں گے۔ اس کے جواب میں حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) نے فرمایا کہ اگر ہم نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے مسئلہ خلافت و امارت کے متعلق سوال کیا اورنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اس سے منع فرما دیا تونبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد لوگ کبھی ہمیں خلافت کا موقع نہیں دیں گے ، اللہ کی قسم ! نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے میں اس بات کا ہر گز سوال نہیں کروں گا۔ چناچہ حافظ ابن کثیر نے بحوالہ بخاری شریف ذکر کیا ہے۔


فقال علی انا واللہ لئن سئالنا ھا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فمنعنا ھا لا یعطینا ھاالناس بعدہ وانی واللہ لا اسالہا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم
( البدائیہ لابن کثیر ج۵ ص۲۲ تحت حالات مرض نبوی صلی اللہ علیہ وسلم بحوالہ بخاری شریف )


اس واقعہ نے واضح کر دیا ہے کہ خم غدیر کے موقعہ پر حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے حق میں کوئی فیصلہ خلافت نہیں ہوا تھا ، ورنہ طے شدہ امر کے لئے اولا تو حضرت عباس (رضی اللہ تعالی عنہ) گفتگو ہی نہ فرماتے۔ ثانیا حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) ارشاد فرماتے کہ اس مسئلہ کا میرے حق میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم غدیر خم میں فیصلہ فرما چکے ہیں۔ لہٰزا اس سوال کی کوئی حاجت نہیں ہے۔

(٢)
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے بعد سیدنا حضرت ابو بکر صدیق (رضی اللہ تعالی عنہ) کے خلیفہ منتخب ہونے کے موقعہ پر حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) نے اپنے حق میں اس نص صریح کو کیوں پیش نہیں فرمایا ؟


(٣)
تمام مہاجرین وانصار صحابہ کرام (رضی اللہ تعالی عنہ) جو غدیر خم کے موقعہ پر اس فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم کو براہ راست سننے والے تھے انہوں نے اس نص صریح کو یکسر کیسے فراموش کردیا ؟ اگر کوئی صاحب یہ کہنے کی جرائت کریں کہ ان حضرات کو حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے بارے نص صریح معلوم تھی مگر انہوں نے فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم بعض دیگر مصالح کی بنا پر پس پشت ڈال دیا اور اس سے اعراض کرتے ہوئے اس پر عمل درٓمد نہیں کیا۔ تو یہ کہنا حقیقت کے بر خلاف ہے۔ نہ شریعت کا مزاج اسے تسلیم کرتا ہے۔ نہ عقل اسے ممکن مانتی ہے۔ وجہ یہ ہے کہ فرمان نبوت کی اطاعت صحابہ کرام کے لئے ایک اہم ترین مقصد حیات تھی۔ لہٰزا یہ تمام حضرات نبوت کیخلاف کیسے مجتمع ہو سکتے تھے ۔ ( لا تجتمع امتی علی الضلال


(٤)


اس طرح دور صدیقی کے اختمام پر حضرت ابوبکر صدیق (رضی اللہ تعالی عنہ) نے اکابر صحابہ کی اور اکابر بنی ہاشم کی موجودگی میں حضرت عمر فاروق (رضی اللہ تعالی عنہ) کو خلیفہ منتخب فرمایا ، اس وقت حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے حق میں خلافت کے متعلق کسی نے یہ نص صریح پیش نہیں کی۔ حالانکہ یہ اثبات خلافت علوی کے لئے ایک اہم موقعہ تھا۔


(٥)

اسی طرح حضرت فاروق اعظم (رضی اللہ تعالی عنہ) اپنی شہادت کے موقعہ پر خلیفہ کے انتخاب کے لئے ایک کیٹی مقرر کی تھی۔ جس طرح کہ اہل سیرت و تاریخ کو معلوم ہے پھر حضرت عمر فاروق (رضی اللہ تعالی عنہ) کے وصال کے بعد ان حضرات کا باہمی مشوہ ہوا اور انتخاب کا مکمل اختیار حضرت عبدالرحمٰن بن عوف (رضی اللہ تعالی عنہ) کو دیا تھا ، پھر حضرت عبدالرحمٰن بن عوف (رضی اللہ تعالی عنہ) نے سیدنا حضرت عثمان (رضی اللہ تعالی عنہ) خلیفہ منتخب فرمایا۔ تو اس موقعہ پر کسی ہا شمی ! غیر ہاشمی غدیر خم والی نص صریح کو پیش نہیں کیا۔


(٦)

حضرت عثمان (رضی اللہ تعالی عنہ) کی شہادت کے بعد جب لوگ حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے ہاتھ پر خلافت کی بیعت کرنے کے لئے حاضر ہوئے تو حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) نے بیعت لینے سے نکار کردیا۔ اور بنی عمرو بن مبدول کے باغ میں جا کر الگ بیٹھ گئے اور دروازہ بند کر لیا۔ جیسا کہ حافظ ابن کثیر نے البدایہ میں ذکر کیا ہے کہ ۔


وقد امتنع علی رضی اللہ عنہ من احابتہم الی قبول الامارۃ حتی تکرر قولہم لہ وفرمنہم الی حائط بنی عمر بن مبدول واغلق بابہ َ
( البدایہ ج۷ ص ۲۲۵ ۔ قبل ذکر بیعت علی بالخلافۃ )
اور شیعہ علماء نے اس سلسلہ میں خود حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کا کلام نہج البلاغہ میں ذکر کیا ہے کہ جب لوگ حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے پاس حاضر ہوئے تو آپ نے فرمایا کہ
دعونی والتمسوا غیری ۔ ۔ ۔ وان ترکتمونی فانا کاحدکم ولعلی اسمعکم واطوعکم لمن ولیتموہامرکم وانالکم وزیرا خیرلکم منی امیرا۔
] نہج الباغۃ للسیدالشریف ارضی ص۱۸۱۔ طبع مصر ۔ تحت ومن خطبۃ لہ علیہ السلام لما ارید علی البیت بعد قتل عثمان [
یعنی (بیعت کے معاملہ میں ) مجھے تم چھوڑ دو اور میرے سوا کسی اور کو تلاش کر لو ۔۔۔۔ اور اگر مجھے تم چھوڑ دو گئے تو میں تم میں سے ایک فرد ہونگا۔ اور جس شخص کو تم اپنے امر کا والی بناو گئے امید ہے کہ میں اس کا تم سب سے زیادہ تابعدار اور زیدہ مطیع ہوں گا اور میرا تمہارے لئے وزیر رہنا امیر بننے سے زیادہ بہتر ہے۔

مندرجات بالا کی روشنی میں واضح ہو کہ سیدنا حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) نے اولا انکار فرمایا۔ اگرچہ بعد میں دیگر اکابر صحابہ کرام عیہم الرضوان کے اصرار پر بیعت لینا منظور فرمالیا۔ اس سے معلوم ہوا کہ غدیر خم یا کسی دیگر مقام میں حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی خلافت بلا فصل کے لئے کوئی نص صریح موجود نہیں ورنہ آپ انالکم وزیرا خیرلکم منی امیرا جیسا کلام نہ فرماتے۔


(٧)


امام حسن (رضی اللہ تعالی عنہ) کے صاحبزادے حضرت حسن مثنٰی کے سامنے ان کے ایک عقیدت مند نے کہا کہ۔ کیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کے متعلق یہ نہیں فرمایا کہ : من کنت مولا ہ فعلی مولا ہ : جس کا میں مولا اس کے علی مولا ہیں۔

اس کے جواب میں حضرت حسن مثنٰی فرماتے ہیں کہ

اما واللہ لویعنی بذالک الامرۃ والسلطٰن لا فصح لہم بذالک کما افصح لہم بالصلوۃوالزکوۃ وصیام رمضان وحج البیت ویقال لھم ایہاالناس ھذا ولیکم من بعدی فان افصح الناس کان للناس رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ۔
( طبقات ابن سعد ج۵ تحت تذکرہ حسن بن حسن رضی اللہ عنہم )


یعنی اگر اس جملہ سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی مراد امارت اور سلطنت ہوتی تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نماز ، زکوۃ، روزہ رمضان ، اورحج بیت اللہ کی طرح واضح طور پر اس کا حکم صادر فرماتے اور فرمادیتے کہ اے لوگو ! علی میرے بعد تمہارے حاکم ہیں۔ کیونہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تمام لوگوں سے زیادہ فصیح ( اور افصح الناس ) تھے۔

اس سے بھی یہ واضح ہو گیا کہ ۔ من کنت مولاہ فعلی مولاہ ۔ کا جملہ اکابر ہاشمی حضرات کے نزدیک بھی خلافت بلا فصل کے لئے نص صریح نہیں۔
مندرجہ عنوان کے تحت جن چیزوں کو ذکر کیا گیا ہے ان تمام پر غور کر لینے سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ غدیر خم کے موقعہ پر جو فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم صادر ہوا اس کا حضرت علی (رضی اللہ تعالی عنہ) کی خلافت بلا فصل کے ساتھ کچھ تعلق نہیں ہے اور نہ ہی مسئلہ خلافت وہاں مطلوب و مقصود تھا۔ بلکہ وقتی تقاضوں کے مطابق اس میں دیگر مقاصد پیش نظر تھے جن کو وہاں پورا کردیا گیا اللہ کریم ہمیں سمجھ اور عمل کی توفیق عطا فرمائے
دارالافتاء اھلسنت
سانگلہ ہل
03007639611