عورت کا دشمن کون۔۔۔۔۔؟


ایک چیز اکثر زیرِ موضوع ہوتی ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرد حضرات عورتوں پر ظلم وستم کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان کا استحصال کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان کے ساتھ ناانصافی کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان کا جائز حق نہیں دیا جاتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان باتوں سے انکار نہیں لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا کبھی کسی نے سوچا کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرد سے زیادہ عورت ذات ہی عورت کی دشمن ہے۔؟

ایک عورت اپنی بیٹی کی قابلیت کا چرچا ہرمحفل میں کرنا اپنا اولین فرض خیال کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بیٹی کی خامی بھی خوبی نظر آتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اس کی ناکامی کو بھی کامیابی سمجھا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن جب وہی عورت ایک ساس کے روپ میں ہوتو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گھر میں آنے والی بہوکو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پرائی نظر سے دیکھتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کا سگھڑ پن لاابالی کی شکل اختیار کرجاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کی تعلیم اس کے لیے طعنہ بن جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ اتنا پڑھا لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تربیت کا فقدان ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیر سے جاگنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نکھٹو کہلاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اگر بیٹا خدانخواستہ بیوی کی عزت کرنے والا ثابت ہوجائےتو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماں کی نافرمانی اور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بیوی کے نیچے لگنے کا طعنہ بھی ایک عورت ہی دیتی ہے۔

اسی طرح بہوبن کر آنے والی بھی بیٹی بھی ایک عورت ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ سسرال آںے سے پہلے ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کے وہم و گمان میں یہ بات بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یا بٹھا دی جاتی ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سسرال تمہارا اپنا گھر نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور نہ ہی ساس سسر، دیور دیورانی، جیٹھ جیٹھانی اور نند تمارے اپنے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر ساس کسی کام کی درستی کی طرف اشارہ کردے تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے نکتہ چینی ، عیب جوئی، اور اعتراض شمار کیا جاتا ہے۔ جب فطرت میں ایسی ذہنیت شامل ہوجائے تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی بھی اس گھر میں راحت اور سکون کی فضاء قائم نہیں ہوسکتی۔

آئے دن گھروں میں بھابھی اور نند کا جھگڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیورانی اور جیٹھانی کا جھگڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ساس اور بہو کا جھگڑا ہوتا رہتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جبکہ ایسا بہت کم سننے کو ملے گا کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بہو اور سسر کا جھگڑا ہوگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یا بھابھی اور دیور جیٹھ کا جھگڑا ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ نہیں کہ مرد لڑائی جھگڑا نہیں کرتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن شاذر و نادر ایسا موقع دیکھنے کو ملتا ہے۔

اسی طرح گھروں میں کام کرنے والی عورتیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس کو عرف میں ماسی کہہ دیا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس پر حکمرانی کرنے والی بھی ایک عورت ہی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ مجبوری کی خاطر دوسروں کی نوکری کرنے والیوں کے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ صرت ظالمانہ سلوک کیا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ اس کو حقیر سمجھا جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ گھروں میں بعض اوقات ماسیوں کا اہم رول ہوتا ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب وہ محلے میں پھرنے والی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو کئی گھروں کی خیر خبر اور لڑائی جھگڑا مالکن صاحبہ تک پہنچ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور یہاں بھی مالکن کی صورت میں عورت ہی عورت کی دشمن ثابت ہوتی ہے۔

اس لیے معاشرے کی ہر ماں بہن بیٹی اور بیوی کا حق بنتا ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ آپس میں محبتیں بانٹیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ کہ عورت ذات کی دشمنی میں ایک دوسری کی ٹانگیں کھینچیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بہو اپنی ساس کے روپ میں ماں اور سسر کے روپ میں باپ کا تصور کرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اسی طرح ساس سسر بہو کو اپنی حقیقی بیٹی کی نظر سے دیکھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ اب وہ ان کے بیٹے کی خوشی اور زندگی کا ساتھی بن چکی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور بہن بھی بھابھی کے ساتھ بھائی کے رشتہ سے حسنِ سلوک کا رشتہ بحال رکھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو یقینا ہر طرف خوش حالی اور سکون ہوگا۔

اس مضمون کا مقصد کسی کو ہدفِ تنقید بنانا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکہ ایک معاشرتی مسئلہ کی طرف توجہ دلانا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ تعالیٰ ہر ماں بہن بیٹی بیوی کی حفاظت فرمائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور آپس میں پیار، محبت، امن ، سکون، اتحاد کی فضاء قائم کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین


✍__اسدالرحمٰن
23اگست جمعہ 2019