بچےسکول جانے کی تیاری کررہے تھے ، میں نے کہا
بیٹا! ایک نعت شریف ہی سنا دو ۔
کہتے ہیں:
باباجی! ننگے سر تو نہیں پڑھتےناں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھہریں ، سرڈھانپ لیں ۔


پھر فوراً سر ڈھانپا ، ہاتھ باندھے اور آنکھیں بند کرکے بارگاہِ رسالت میں عرض کرنے لگے ؎


بَہرِ دیدار مُشتاق ہے ہر نَظَر ، دونوں عَالَم کے سرکارآجائیے
چاندنی رات ہے اور پِچھلا پَہَر ، دونوں عالَم کے سرکار آجائیے


سامنے جَلوہ گر پَیکرِ نور ہو ، مُنکِروں کا بھی سرکار شَک دُور ہو
کرکے تبدیل اِک دن لِباسِ بَشَر ، دونوں عالم کے سرکار آجائیے


💧💧💧


میری آنکھیں نم ہوگئیں اور میں نے اگلے اشعار پڑھے ؎


دل کا ٹوٹا ہوا آبگینہ لیے ، جَذبۂ اِشتِیاقِ مدینہ لیے
کتنے گھائِل کھڑے ہیں سَرِ رہ گُزر ، دونوں عالم کے سرکار آجائیے


آخِری وقت ہے ایک بیمار کا ، دل مچلنے لگا شوقِ دیدار کا
بُجھ نہ جائے کہیں یہ چراغِ سَحَر ، دونوں عالَم کے سرکارآجائیے !!


✍️لقمان شاہد
21-1-20 ء